Definition and Scope of Tasawwuf

Rate this item
(0 votes)

 
 

موضوع علم تصوف 


کسی علم کے موضوع کا تعین اس کے عوارضاتِ ذاتیہ  (یعنی اسکے ذاتی اثرات )کی بحث سے ہوتا ہے پس علم تصوف کا موضوع مکلفین  (تصوف اپنانے والوں)کے احوال ہیں مگر مطلقاً احوال نہیں (یعنی تصوف صرف احوال و کیفیات تک محدود نہیں)  بلکہ اس حیثیت سے کہ کونسا فعل قرب الٰہی کا سبب بنتا ہے اور کونسا فعل اللہ سے دوری کا موجب ۔ جیسا کہ علم طب میں موضوع بدن انسانی ہے لیکن مطلقاً بدن نہیں بلکہ مِنْ حَیْثُ الصِّحَّتِ وَالْمَرَضِ (صحت اور بیماری کی حیثیت سے )

پس علمِ تصوف میں بھی احوال مکلفین کے متعلق اللہ تعالیٰ کے قرب و بُعد کی حیثیت سے بحث ہوگی۔ 



علمِ تصوف کی تعریف اور غایت 


ھُوَ عِلْم’‘ تُعْرَفُ بِہٖ اَحْوَالُ تَزْکِیَۃِ النُّفُوْسِ وَ تَصْفِیَۃِ الاَخْلَاقِ وَ تَعْمِیْرِ الْبَاطِنِ وَالظَّاھِرِ لِنَیْلِ السَّعَادَۃِ الْاَبَدِیَّۃِ وَیَحْصِلُ بِہٖ اِصْلَاحُ النَّفْسِ وَالمَعْرِفَۃُ وَرَضَا ءُ الرَّبِّ وَمَوْضُوْعُہُ التَزْکِیَۃُ والتَّصْفِیَۃُ وَالتَّعْمِیْرُ الْمَذْکُوْرَاتِ وَغَایَتُہ’‘ نَیْل’ السَّعَادَۃِ الْاَبَدِیَّۃِ۔

"تصوف وہ علم ہے جس سے تزکیہ نفوس اور تصفیہ اخلاق اور ظاہر و باطن کی تعمیر کے احوال پہچانے جاتے ہیں۔ تاکہ سعادت ابدی حاصل ہو نفس کی اصلاح ہواور رب العالمین کی رضا اور اسکی معرفت حاصل ہواور تصوف کا موضوع تزکیہ تصفیہ اور تعمیر باطن ہے اور اس کا مقصد ابدی سعادت کا حصول ہے۔‘‘ 

تعریف، موضوع اور غایت کا بیان اس لئے کیا گیا ہے کہ ہر علم کی شان ان امور سہ گانہ سے واضح ہو جاتی ہے اور ہماری غرض یہ ہے کہ تصوف و سلوک کا دین اسلام میں جو مقام اور مرتبہ ہے وہ ظاہر ہو جائے اور کسی کے لئے اس امر کی گنجائش نہ رہے کہ محض اس احتمال سے یہ علم ظنی(یعنی قطعی نہیں ہے بلکہ قطعی علوم سے اخذ کیا گیا ہے)  ہے وہ اسے قابل اعتنا نہ سمجھے۔ یہ ایک بدیہی حقیقت ہے کہ دین کے دوسرے شعبوں میں ہزاروں مسائل ایسے ہیں جن کی حیثیت ظنی مسائل کی ہے۔ انہیں قبول کرلینا اور علم تصوف میں صرف ظنی کا احتمال پیدا کرکے اسے چھوڑ دینا اور اس عقیدہ میں غلو  کرنا علمی دیانت سے بعید ہے ایسا کرنا در حقیقت ارباب تصوف یعنی اولیاء اللہ سے عداوت کرنے کے مترادف ہے جس کے لئے مَنْ عَادٰی لِیْ وَلِیًّا فَقَدْ اٰذَنْتُہ‘ لِلْحَرْب(جس نے میرے ولی سے عداوت کی میں اس کے خلاف اعلان جنگ کرتا ہوں )کی وعید موجود ہے اس لئے تصوف کے معاندین اپنی عاقبت کی فکر کریں۔ 

یہ مسلمہ حقیقت ہے کہ جو شخص کسی فن میں مہارت نہیں رکھتا۔ اسے اس فن اور اہل فن پر تنقید کا حق نہیں پہنچتا۔ چنانچہ ہم دیکھتے ہیں کہ فلاسفہ جنہیں علم و تحقیق پر بہت ناز ہے۔ جب تصوف پر بحث کرتے ہوئے مسئلہ کشف پر آتے ہیں تو ان کے لئے اس عاجزانہ اعتراف کے بغیر اور کوئی راستہ نہیں ملتا۔ 

ھٰذَا طَوْر’‘ وَرَاءَ طَوْرِ الْعَقْلِ لَاُ یدْرِکُہُ اِلَّا اَصْحَابِ قُوَّۃَ الْقُدْسِیَۃَ


تصوف کیا نہیں


تصوف کے لئے نہ کشف و کرامات شرط ہے نہ دنیا کے کاروبار میں ترقی دلانے کا نام تصوف ہے نہ تعویذ گنڈوں کا نام تصوف ہے نہ جھاڑ پھونک سے بیماری دور کرنے کا نام تصوف ہے۔ نہ مقدمات جیتنے کا نام تصوف ہے نہ قبروں پر سجدہ کرنے، ان پر چادریں چڑھانے اور چراغ جلانیکا نام تصوف ہے۔ اور نہ آنے والے واقعات کی خبر دینے کا نام تصوف ہے۔ نہ اولیاء اللہ کو غیبی ندا کرنا۔ مشکل کشا اور حاجت روا سمجھنا تصوف ہے۔ نہ اس میں ٹھیکیداری ہے کہ پیر کی ایک توجہ سے مرید کی پوری اصلاح ہو جائے گی اور سلوک کی دولت بغیر مجاہدہ اور بدون اتباعِ سنت حاصل ہو جائے گی۔ نہ اس میں کشف و الہام کا صحیح اترنا لازمی ہے اور نہ وجد و تواجد اور رقص و سرود کا نام تصوف ہے یہ سب چیزیں تصوف کا لازمہ بلکہ عین تصوف سمجھی جاتی ہیں۔ حالانکہ ان میں سے کسی ایک چیز پر تصوف اسلامی کا اطلاق نہیں ہوتا۔ بلکہ یہ ساری خرافات اسلامی تصوف کی عین ضد ہیں۔ 
 
 

 


 

 

Definition, Objective and Scope of Sufism

The topic of any type of knowledge is decided by a discussion of the effects that it causes، so the topic of Sufism includes a study of the (spiritual) conditions that the Sufi seekers go through. However, these states or conditions are not discussed for their own sake, but within the context that whether a particular action takes one closer to, or away from Allah. For example, medical science does not study the human body as an absolute objective, but within the context of health and disease.

Hence, the knowledge of Sufism involves a discussion the states of the incumbents with reference to the nearness or distancing from Allah.

Definition of Sufism

Sufism (Tasawwuf) is the knowledge through which the processes of spiritual purification, moral reformation, and inward and outward character building are identified, so that eternal success can be achieved, the soul can be reformed, and Allah's pleasure and nearness can be achieved. The scope of Sufism includes Tazkiyah (purification), Tasfiah (cleansing) and Inward character building. And the objective of Sufism is the achievement of everlasting success.

The definition, objective and scope of Sufism have been described because the importance of any particular form of knowledge is highlighted by these three things. Our purpose is to underline the rightful status and place of Sufism in Deen-e-Islam, so that there should be no room for anyone to ignore this knowledge merely because it was compiled after the times of the Holy Prophet ﷺ and the Sahaba.

A Warning for Tasawwuf Deniers

It's an undeniable fact that in other departments of Deen, there are thousands of affairs that were introduced after the times of the Holy Prophet ﷺ and the Sahaba (RAA) and were derived from their way of life in the light of the Duran and the Sunnah. To accept all those affairs and just leaving out and doubting Tasawwuf amounts to intellectual dishonesty. Such attitude amounts to opposing Aulia-Allah, for which the repercussion of مَنْ عَادٰی لِیْ وَلِیًّا فَقَدْ اٰذَنْتُہ‘ لِلْحَرْب (whoever opposes My Wali declares war against Me) is very clear. Therefore, the opponents of Tasawwuf should be worried about their afterlife.

It is a concrete fact that the person who is not an expert in a particular field has no right to criticize or object to that particular field or its experts. Consequently, we see that the philosophers, who take pride in their knowledge and research, when they are discussing Tasawwuf and have to explain the phenomenon of Kashf (paranormal vision), they have no other option but to admit that:

ھٰذَا طَوْر’‘ وَرَاءَ طَوْرِ الْعَقْلِ لَا ُیدْرِکُہُ اِلَّا اَصْحَابِ قُوَّۃَ الْقُدْسِیَۃَ

This is a state that is beyond the reach of intellect. Only those know about it who are blessed with this holy power.

What Sufism is NOT

Karamat or Kashf are not necessary in Sufism. Gaining success in the business of the world is not Sufism. Tasawwuf is not the name of healing an illness by blowing on the patient. It is not a means to win feuds. It is not the name of touching one's forehead at a gravestone or lighting lamps or placing flowers at a grave. And nor does Sufism mean informing about future events. It is not the name of taking a Wali-Allah as easer of troubles or provider of needs and calling on to his name in his absence. In Sufism there is no concept of the teacher being a proxy for the seeker and it is not possible to achieve the invaluable wealth of Salook (Sufi Path) without striving for it and following the Sunnah. In true Sufism it is not a must that Kashf and paranormal visions will always be correct, and nor is it a name for tranced dancing on folk music. All these things are considered the essentials of Sufism. Whereas Islamic Sufism does not validate even a single one of such practices. Rather, all these absurdities are the exact opposites of Islamic Sufism.